حضرت عیسیٰ السمیح اور حضرت یونس کا نشان

ہم نے دیکھا کہ انجیل مقدس میں کس طرح حضرت عیسیٰ المسیح کی تعلیم، شفا، اور معجزات کو درج کیا گیا ہے۔ آپ نے اکثر اپنے سامعین کو دعوت دی۔ کہ وہ سب کچھ حاصل کرسکتے ہیں۔ جس کی آپ پیشکش کررہے ہیں۔ آپ نے گنہگاروں کو رحمت بھرے "زندگی کے پانی" کی پیشکش کی، اور "کھوئے ہووں" کو "اللہ تعالیٰ کی بادشاہی" میں خوش آمدید کہا۔ لیکن یہ سب اُن کے لیے ہے جو اپنی مرضی سے آنا چاہتے ہیں۔

ان تعلیمات نے ان کے مذہبی راہنماوں (اماموں) کو الجھن میں ڈال دیا۔ خاص طور پر وہ اس حیرانگی میں پڑگے کہ آپ کس اختیار سے لوگوں کے ساتھ کلام کرتے ہیں۔ مثال کے طور پر، کیا حضرت عیسیٰ المسیح کے پاس واقعی گنہگاروں کو اللہ تعالیٰ کا رحم دینے کا اختیار حاصل ہے۔ اور جنت میں مدعو کرنے کا اختیارکہا سے حاصل کیا؟ لہذا مذہبی راہنماوں نے آپ سے نشان مانگا تاکہ وہ آپ کے ان دعووں کا یقین کرسکیں انجیل مقدس میں یہ گفتگو اس طرح درج ہے۔

حضرت عیسیٰ حضرت یونس کے نشان کا حوالہ دیتے ہیں

‘اِس پر بعض فقِیہوں اورفرِیسِیوں نے جواب میں اُس سے کہا اَے اُستاد ہم تُجھ سے ایک نِشان دیکھنا چاہتے ہیں۔ اُس نے جواب دے کراُن سے کہا اِس زمانہ کے بُرے اور زِناکار لوگ نِشان طلب کرتے ہیں مگر یُوناہ نبی کے نِشان کے سِوا کوئی اَور نِشان اُن کونہ دِیا جائے گا۔ کیونکہ جَیسے یُو ناہ تِین رات دِن مچھلی کے پیٹ میں رہا وَیسے ہی اِبنِ آدم تِین رات دِن زمِین کے اندر رہے گا۔ نِینو ہ کے لوگ عدالت کے دِن اِس زمانہ کے لوگوں کے ساتھ کھڑے ہو کر اِن کومُجرِم ٹھہرائیں گے کیونکہ اُنہوں نے یُو ناہ کی مُنادی پر تَوبہ کر لی اور دیکھو یہاں وہ ہے جو یُو ناہ سے بھی بڑا ہے۔ ‘

متّی 12: 38-41

حضرت یونس تاریخ میں

حضرت عیسیٰ المسیح اُن کو حضرت یونس کی طرف اشارہ کرتے ہوئے جواب دیتے ہیں۔ آپ ذیل میں ٹائم لائین میں دیکھ سکتےہیں۔ کہ حضرت یونس حضرت عیسیٰ المسیح سے 800 سال پہلے نازل ہوئے تھے۔

حضرت یونس قرآن شریف میں

حضرت یونس پر جو کتاب نازل ہوئی تھی۔ قرآن شریف میں اُس کا خلاصہ اس طرح بیان کیا گیا ہے۔

اور یونس بھی پیغمبروں میں سے تھے ﴿139﴾  جب بھاگ کر بھری ہوئی کشتی میں پہنچے ﴿140﴾  اس وقت قرعہ ڈالا تو انہوں نے زک اُٹھائی ﴿141﴾  پھر مچھلی نے ان کو نگل لیا اور وہ (قابل) ملامت (کام) کرنے والے تھے ﴿142﴾  پھر اگر وہ (خدا کی) پاکی بیان نہ کرتے ﴿143﴾  تو اس روز تک کہ لوگ دوبارہ زندہ کئے جائیں گے اسی کے پیٹ میں رہتے ﴿144﴾  پھر ہم نے ان کو جب کہ وہ بیمار تھے فراخ میدان میں ڈال دیا ﴿145﴾  اور ان پر کدو کا درخت اُگایا ﴿146﴾  اور ان کو لاکھ یا اس سے زیادہ (لوگوں) کی طرف (پیغمبر بنا کر) بھیجا ﴿147﴾  تو وہ ایمان لے آئے سو ہم نے بھی ان کو (دنیا میں) ایک وقت (مقرر) تک فائدے دیتے رہے ﴿148﴾ 

 سُوۡرَةُ الصَّافات37: 139-148

حضرت یونس کو ایک بڑی مچھلی نے نگل لیا تھا۔ کیونکہ آپ اللہ تعالیٰ کے ایک دیئے ہوئے مشن سے بھاگ رہے تھے۔ وہ مشن تھا کہ نینوہ کے شہر(آج عراق کا شہر موصل) کو توبہ کرنے کی تبلیغ کرے۔ ایک اسلامی عالم جناب یوسف علی ان آیات کے بارے میں یوں بیان کرتے ہیں۔

یہ صرف محاورہ ہے۔ یہ حضرت یونس کی قبر تھی۔ اگر وہ مچھلی کے پیٹ میں توبہ نہ کرتے۔ تو وہ قیامت کے دن تک اُس مچھلی کے پیٹ میں سے باہرنہیں نکل سکتے تھے۔ قیامت کا مطلب ہے جب سب مردہ زندہ ہوجائیں گے۔

(Footnote 4125 of Yusuf Ali translation of Quran)

دوسرے الفاظ میں، مچھلی کے پیٹ سے مراد سزائے موت تھی۔ اس سے رہائی قیامت والے دن ہونی تھی۔

حضرت یونس کی کتاب میں سے

پرانے عہد نامہ میں حضرت یونس کے مچھلی کے واقع کو تفصیل سے بیان کیا گیا ہے۔ اس میں اسطرح بیان کیا گیا ہے۔

لیکن خُداوند نے ایک بڑی مچھلی مُقرّر کر رکھّی تھی کہ یُونا ہ کو نِگل جائے اور یُونا ہ تِین دِن رات مچھلی کے پیٹ میں رہا۔ یُوناہ 1: 17

‘تب یُونا ہ نے مچھلی کے پیٹ میں خُداوند اپنے خُدا سے یہ دُعا کی۔:- مَیں نے اپنی مُصِیبت میں خُداوند سے دُعا کی اور اُس نے میری سُنی۔ مَیں نے پاتال کی تہ سے دُہائی دی۔ تُو نے میری فریاد سُنی۔ تُو نے مُجھے گہرے سمُندر کی تہ میں پھینک دِیا اور سَیلاب نے مُجھے گھیر لِیا ۔ تیری سب مَوجیں اور لہریں مُجھ پر سے گُذر گِئیں اور مَیں سمجھا کہ تیرے حضُور سے دُور ہو گیا ہُوں لیکن مَیں پِھر تیری مُقدّس ہَیکل کو دیکُھوں گا۔ سَیلاب نے میری جان کا مُحاصرہ کِیا۔ سمُندر میری چاروں طرف تھا۔ بحری نبات میرے سر پر لِپٹ گئی۔ مَیں پہاڑوں کی تہ تک غرق ہو گیا۔ زمِین کے اڑبنگے ہمیشہ کے لِئے مُجھ پر بند ہو گئے ۔ تَو بھی اَے خُداوند میرے خُدا تُو نے میری جان پاتال سے بچائی۔ جب میرا دِل بیتاب ہُؤا تو مَیں نے خُداوند کو یادکِیا اور میری دُعا تیری مُقدّ س ہَیکل میں تیرے حضُور پُہنچی۔ جو لوگ جُھوٹے معبُودوں کو مانتے ہیں وہ شفقت سے محرُوم ہو جاتے ہیں۔ مَیں حمد کرتا ہُؤا تیرے حضُور قُربانی گُذرانُوں گا۔ مَیں اپنی نذریں ادا کرُوں گا۔ نجات خُداوند کی طرف سے ہے۔ اور خُداوند نے مچھلی کو حُکم دِیا اور اُس نے یُونا ہ کو خُشکی پر اُگل دِیا۔ یُوناہ خُداوند کا حُکم مانتاہے’ یُوناہ 2: 1-10

حضرت یونس کا نشان کیا ہے؟

عام طور پر ہم یہ توقع کرتے ہیں۔ کہ جب کبھی کسی کے اختیار کو چیلنج کیا جاتا ہے۔ جس طرح حضرت عیسیٰ المسیح کے اختیار کو یہاں پر چیلنج کیا گیا۔ تو توقع یہ کی جاتی ہے کہ کہ اس کا جواب اپنی طاقت، فتح، یا کامیابی دیکھا کے دیا جائے گا۔ لیکن حضرت عیسیٰ المسیح نے اپنے اخیتار کا دفاع حضرت یونس کی طرف اشارہ کرکے دیا۔ جس طرح حضرت یونس "تین دن موت کی حکمرانی” – گھڑے یا قبر میں رہے۔ اس وقت کے دوران جب یونس نے اللہ تعالیٰ کی نافرمانی کی تو وہ آپ یعنی لوگوں کی نظروں سے اُوجھل کردیا گیا۔ مثال کے طور پر اللہ تعالیٰ کی نظروں سے اوجھل ہوگئے۔ حضرت یونس کا تین دن کے لیے موت کے گھڑے میں سے مراد اللہ تعالیٰ کی نظروں سے اوجھل ہوجانا۔ ایک حیرت انگیز اللہ کی طرف سے اختیار کو ظاہر کرتا ہے۔ حضرت عیسیٰ المسیح نے اپنے اختیار کو ظاہر کرنے کے لیے اس نشان کا کیوں ذکر کیا ؟

یہ پہلی بارنہیں ہے۔ کہ ہم کمزوری کو اور موت کو اللہ تعالیٰ کے نشان کے طور پر جانتے ہیں۔ ہم نے دیکھا کہ حضرت یسعیاہ نبی آنے والے خادم کے بارے میں نبوت کرتے ہیں۔ ہم نے حضرت یسعیاہ نبی کی نبوت سے جانا کہ اُنہوں نے نبوت کی تھی۔ کہ آںے والے خادم کو ناپسند کیا جائے گا۔ اورآدمیوں کی طرف سے رد کردیا جائے گا۔ اور یہ سمجھا جائے گا کہ اُس کو اللہ تعالیٰ نے سزا دی ہے۔ اور اُس کو زندوں کیزمین پر سے کاٹ ڈالا جائے گا، اور اُس کی قبر شریروں میں ہوگی۔ یہ سب باتیں حضرت یونس کے واقعہ سے ملتیں جولتی نظر آتیں ہیں۔ ابھی بھی عجیب سی بات لگتی ہے۔ کہ یہ سب اللہ تعالیٰ کی مرضی تھی کہ اُس (خادم) کو کچلے۔ شاید آپ ابھی اس بات کو نہ سمجھیں کہ حضرت عیسیٰ المسیح نے کیوں اس نشان کا انتخاب کیا۔ یہ ایک الگ تھلگ واقعہ نہیں ہے۔

حضرت یونس کی دعا کے اختتام سے ہمیں اس بات کو سمجھنے میں مدد ملتی ہے۔ جو اُنہوں نے مچھلی کے پیٹ میں اللہ تعالیٰ کے حضور فرمائی۔ حضرت یونس کی دعا کا آخری جملہ یوں تھا۔ "نجات اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے” ہم نے دیکھا کہ حضرت عیسیٰ کا نام اردو میں یسوع اور عبرانی میں یشوع کا مطلب ایک ہے۔ جس کے بارے میں آنے والی شاخ کے بارے میں نبوت کی گئی تھی۔ لیکن یشوع کا کیا مطلب ہے؟ عبرانی میں اس کا مطلب ہے "اللہ ہمیں نجات دیتا ہے”۔ حضرت یونس کی دعامیں اُس نے اس بات کو جانا کہ اُن کو نجات کی ضرورت ہے۔ اور صرف اللہ تعالیٰ ہی نجات دے سکتا ہے۔ حضرت یونس کے دوہرے سچ میں دونوں ضرورتوں کا اعلان ہوجاتا ہے۔ اللہ تعالیٰ جو ہمیں نجات دیتا ہے۔ حضرت عیسیٰ کے نام (یشوع عبرانی میں) کا لفظی مطلب بھی یہ ہی ہے۔ جس کا حضرت یونس نے حتمی طور پر مچھلی کے پیٹ میں اقرار کیا کیونکہ یشوع/ عیسیٰ کا مطلب بھی یہ ہی ہے” اللہ ہمیں نجات دیتا ہے”

حضرت عیسیٰ المسیح نے مذہبی راہنماوں کے ساتھ اپنی گفتگو کا اختتام اس طرح کیا۔ اس بات کو یاد کروایا کہ نینوہ کے لوگوں (توبہ کی)نے حضرت یونس کی تبلیغ پر ایمان لایا اور توبہ کی۔ لیکن وہ راہنما جو حضرت عیسیٰ المسیح کو سُن رہے تھے۔ وہ توبہ کے لیے تیار نہیں تھے۔ یہ راہنما اس بات کو تسلیم نہیں کرنا چاہتے تھے کہ اُن کو نجات کی ضرورت ہے۔ ہمیں بھی اپنے دلوں کو جانچ لینا چاہیے کیا ہم نینوہ کے لوگوں کی مانند ہیں(جہنوں نے توبہ کی) یا ہم راہنماوں (جن کو ضرورت نہیں)۔ آپ ان دونوں میں سے کون ہیں۔

ہم حضرت عیسیٰ المسیح کے اس مضمون کو جاری رکھیں گے تاکہ ہم مکمل طور پر جان سکیں کہ حضرت یونس کے اس نشان کا کیا مطلب ہے اوریہ کیا ہے۔ ‘اللہ بچاتا ہے’ جس طرح حضرت عیسیٰ المسیح کا مشن اس کے اختتام کی طرف بڑھتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے