قدیم منطقہ البروج میں برج میزان

منطقہ ال بروج تاروں کے مجمع میں برج میزان دوسرا ہے اور اس کے معنی ہیں ‘ناپ تول کے ترازو’ – آج  کے زائچے میں اگر آپ کی  پیدایش  ستمبر 24 اور اکتوبر 23 کے درمیان ہوئی ہے تو آ پ برج میزان کے ہیں – آج کا زائچہ آپ کی  قسمت اور برکت کے لئے رہنمائی کرتا ہے جس طرح سے آپ کی پیدائش کی تاریخ فیصلہ لیتی ہے – یہ 12 منطقہ البروج کی نشا نیوں  سے  متعلق ہے جو آپکی شخصیّت میں بصیرت دیتا ہے – موجودہ علم نجوم زائچہ کا استعمال کرتی ہے تاکہ ہماری رہنمائی کرے سچچی محبّت کے لئے (محبّت کا زائچہ) ، یا خوش قسمت اور کامیابی کی طرف فیصلوں کے لئے یا تندرستی اور دولت سے متعلق فیصلوں میں –مگر کیا وہ اس کے اصلی معنی  تھے ؟

      ہوشیار ہو جایں ! اس کا جواب دیتے ہوئے آپکو ایک فرق سفر کے منصوبے لے جاتے ہوئے آپ کے ستاروں کی حالت کا مشاہدہ (زائچہ) غیر واضح طور سے کھلیگا –پھر آپ اپنے زائچہ کی نشانی کو جانچتے ہوئے ارادہ کیۓ جاؤگے

برج میزان کے تاروں کا مجمع

برج میزان کے تاروں کی اسویر :کیا آپ اس تصویر میں ناپ تول ترازو کو دیکھتے ہیں ؟

برج میزان تاروں  کا ایک مجمع ہے جو پیمانہ  یا ترازو کی شکل بناتا ہے – یہاں برج میزان کے تاروں کی ایک تصویر ہے – کیا آپ اس  تاروں کے نقشے میں ‘ ناپ تول کے ترازو’ کو دیکھ سکتے ہیں ؟ نہیں –

برج میزان کے تاروں کا مجمع تا روں  کےساتھ لکیروں کو جوڑتے ہوئے

د راصل یہاں تک کہ اگر ہم برج میزان کے تاروں کو لکیرونسے جوڑتے بھی ہیں تو بھی ترازو کودیکھنا مشکل ہے مگر یہ ناپ تول کی نشانی جیسا کہ ہم جا نتے ہیں انسانی تاریخ میں پیچھے کی طرف جاتی ہے –  

یہاں مصر کے ڈ ینڈ را مندر میں برج میزان کے ترازو کے ساتھ منطقہ البروج کی ایک تصویر ہے جو 2000 سال سے بھی زیادہ پرانی ہے – برج میزان کے ترازو کو سرخ رنگ سے دائرہ کھینچا گیا ہے –  

 ڈ ینڈ را کا منطقہ البروج برج میزان کے ساتھ سرخ رنگ کے دایرے میں

ذیل میں قومی جغرافیہ کے منطقہ البروج کے برج میزان کا نقشہ دیا گیا ہے جو جنوبی نصف کررہ میں دکھائی دیتا ہے – متلث کی شکل ہرگز ایک ترازو جیسا نظر نہیں آتا –

قومی جغرافیہ میں منطقہ البروج کے تاروں کے مجمع کا نقشہ – برج میزان کو سرخ رنگ ث دائرہ کھینچا گیا ہے

سو اس کے معنی یہ ہوئے کہ آسمانی ترازو کے ناپنے کا آلہ جو برج میزان کے تاروں کے  مجمع میں دکھائی دیتا ہے یہ تاروں کے مجمع کے اندر تخلیقی نہیں ہے بلکی ناپنے والے ترازو کا خیال ستاروں کے علاوہ کسی اور چیز سے پہلے آیا  -پہلے کے نجومیوں نے بعد میں اس خیال کو تاروں پر بچھایا تاکہ ایک متواتر نشان ایک یادگاری کے سہارے کو  لئے ہوے ہو قدیم لوگ برج میزان کا اشارہ اپنے بچچوں کے لئے کر سکتے تھے اور انھیں ناپنے والے ترازو کی کہانی انھیں کہ سکتے تھے – یہ تھا اسکا ا صلی نجومی مقصد –      

تاروں کے مجموعہ کا بانی

منطقہ ال بروج  کے تاروں کا مجمع سب ملکر ایک کہانی بناتے ہیں –جو تاروں میں لکھی ہوئی ہیں –مگر یہ کہانی کس نے لکھی ؟ ال فرقان ہم سے کہتا ہے کی خود الله نے آسمان میں تاروں کے مجمع (مجموعہ ت النجوم)کو بنایا –

"اور خدا بڑی برکت والا ہے جس نے آسمانوں میں برج بناۓ اور ان میں آفتاب کا نہایت روشن چراغ اور چمکتا ہوا چاند بھی بنایا –”

ال –فرقان٥ ٢ :١ ٦   

بائبل کی سب سے پرانی کتاب ، یہانتک کہ  حضرت موسیٰ علیہ السلام کے توریت سے پہلے کی کتاب تھی ایوب کی کتاب –ایوب بھی اپنی کتاب میں ان تاروں کے مجمع کا ذ کر کرتے ہیں –

اُس نے بناتُ النّعش اور جبّار اور ثُریّا اور جنُوب کے بُرجوں کو بنایا۔

ایوب ٩ :٩

سو منطقہ البروج کی بارہ نشانیاں ایک کہانی سے بلکہ خالق کی طرف سے دی گیئ ہے – یہ وہ آسمانی لڑائی کی کہانی ہے جسمیں خالق اور اسکے دشمن کے د رمیان کشمکش جاری رہتی ہے – برج کنیا اس کا پہلا باب ہے – آ نے والے کنواری عورت کا بیج – جو رات کے آسمان میں لکھے گئے ہیں وہ سب لوگوں کے دیکھنے کے لئے ہیں –

 قدیم منطقہ البروج میں برج میزان کا باب

ہماری کہانی میں یہ دوسرا باب ہے –برج میزان نے رات کے آسمان میں سب لوگوں کے لئے ایک دوسری نشانی رنگ دی تھی – جس میں ہم الله کے انصاف کی نشانی کو دیکھتے ہیں – یہ  آسمانی ترازو راستبازی ، انصاف ، ترتیب ، حکمرانی اور اسکی بادشاہی کی حکومت کے انتظام کی تصویر پیش کرتی ہے – سو برج میزان میں ہم آمنے سامنے لاتے ہیں ابد ی انصاف کے ساتھ  ، ہمارے گناہوں کے خمیازہ کے وزن کا اندازہ اور چھٹکارے کی قیمت کو – قران شریف کا سورہ ال – قاریہ اسی تجویز کو پیش کرتا ہے جب وہ نیک اعمال کے ترازو کی بات کرتا ہے جب وہ آسمانی میار کے خلا ف میں تولا جاتا ہے –

"اور جس کے وزن ہلکے نکلیںگے اس کا مرجع حاویہ ہے –”

ال – قاریہ ١ ٠ ١ :٨ -٩

بد قسمتی سے یہ تجویز ہمارے لئے مناسب حال (حق میں) نہیں ہے – کیونکہ سب سے زیادہ چمکیلا تارا ترازو کے اوپر ہے –اور جسطرح ال قاریہ خبردار کرتا ہے کہ جسکے وژن ہلکے نکلیںگے اسکا  مرجع  حاویہ ہے –

زبور میں برج میزان

9یقِیناً ادنیٰ لوگ بے ثبات ہیں اور اعلیٰ آدمی جُھوٹے۔ وہ ترازُو میں ہلکے نِکلیں گے۔ وہ سب کے سب بے ثباتی سے بھی ہیچ ہیں۔

زبور٢ ٦ :٩  

برج میزان کا نجومی نشانی ہمکو یہ یاد کرنے کے لئے دیا گیا تھا ہمارے نیک اعمال کا وزن غیر کافی ہے – خدا کی بادشاہی کے انصاف میں ہمارے نیک اعمال کے ترازو میں ایک سانس بھر کا وزن ہی ہے –جو کہ نا تمام ، نا کافی اور غیر کافی ہے –

مگر ہم بغیر امید کے نہیں ہیں جہاں تک قرضہ چکا نے اور قانونی پابندی کا معاملہ ہے ایک قیمت ہے جو ہمارے سزاوار ہونے سے بچا سکتا ہے – مگر یہ کوئی چھوٹی قیمت نہیں ہے کہ اسے چکایا جاۓ – زبور شریف اعلان کرتا ہے کہ

8(کیونکہ اُن کی جان کا فِدیہ گِراں بہا ہے۔ وہ ابد تک ادا نہ ہو گا)

زبور٩ ٤ :٨  

قدیم منطقہ البروج سے آپکے برج میزان کا زائچہ

جبکہ ھوروسکوپ(زائچہ) کا یہ لفظ یونانی کے ‘ھورو’ (وقت) سے نکلا ہے اور اس طرح سے اس کے معنی ہیں خاص اوقات کی طرف نشان دہی کرنا –انبیائی تحریریں ہمارے لئے خاص اوقات کیطرف نشان دہی کرتے ہیں – اسمیں ہم برج میزان کے ‘وقت’ کو نوٹ کر سکتے ہیں – برج میزان کے وقت ‘ھورو’ کی عبارت ان تحریروں سے ہے :

4لیکن جب وقت پُورا ہو گیا تو خُدا نے اپنے بیٹے کو بھیجا جو عَورت سے پَیدا ہُؤا اور شرِیعت کے ماتحت پَیدا ہُؤا۔ 5تاکہ شرِیعت کے ماتحتوں کو مول لے کر چُھڑا لے اور ہم کو لے پالک ہونے کا درجہ مِلے۔

گلتیوں٤ :٤ -٥  

شروعات میں ‘طے کیا ہوا وقت (مقرّرہ وقت) پوری طرح سے آگیا تھا ‘  – انجیل شریف ہمارے پڑھنے کے لئے ایک خاص وقت (حورو) نشان دہی کرتا ہے –یہ وقت آپ کے پیدائشی وقت کی بنا پر نہیں ہے مگر ایک طے شدہ شروعاتی وقت کی بنا پر ہے – اسے شرو کرتے ہوئے حضرت عیسیٰ ال مسیح علیہ السللم ایک ‘عورت سے پیدا ہوئے تھے’ وہ برج کنیا اور اسکے بیج کا حوالہ دیتا ہے

وہ کیسے آیا ؟

وہ ‘شریعت کے ماتحت’ ہوکر آیا – وہ برج میزان کے ترازو میں نپ کر آیا –

وہ کیوں آیا ؟

وہ ہمیں ‘چھٹکارہ’ دینے کے لئے آیا جو ‘شریعت کے ماتحت’  تھے –برج میزان کے ترازو –ہم میں  سے کوئی اگر ترازو کے پلڈ ے میں ہلکے پاۓ جایں – تو وہ ہمیں چھٹکارا دے سکتا ہے –یہ’ لے  پالک سے فرزندگی تک’ کے وعدے کوپورا کرنے  کے لئے پیچھا کرتا ہے –     

آپ کے  برج میزان کے زائچے کی عبارت

ذیل کی رہنمائی کے ساتھ  آج آپ اور میں برج میزان کے زائچے کی عبارت کا استعمال کر سکتے ہیں –

برج میزان ہمکو یاد دلاتا ہے کہ آپ کی دولت کی رغبت آسانی سے لالچ کی طرف لے جا سکتی ہے ، آپ کے رشتے کی رغبت بہت جلد  دوسروں سے رد ّ کئے جانے بطور برتاؤ کا سبب بنا سکتی ہے –جیسے ہی آپ خوشی کی تلاش کرنے  لگتے ہیں تو آپ غا لبا لوگوں کے ذریعے روندے جاتے ہیں –برج میزان ہم سے کہتا ہے کہ اس طرح کے برتاؤ راستبازی کے ترازو کے ساتھ مناسب نہیں ہے – جو کچھ آپ زندگی میں کر رہے ہیں اسے بٹورنے کی کوشش کریں –ہوشیار رہیں کیونکہ برج میزان اور کتاب ہمکو خبردار کرتے ہیں کہ الله آپکے ہر ایک اعمال کو انصاف کے دائرے میں لے آییگا انھیں بھی جو پوشیدہ میں کئے ہوں –

اس دن ا گر آ پ کے نیک اعمال کا پلڈا بہت ہلکا ہوگا تو آ پ کیلئے ایک چھٹکارہ دینے والے کی ضرورت پڑیگی –آپ ابھی اپنے سارے انتخاب کی چھان بین کریں مگر یاد رکہیں کہ برج کنیا کا بیج آیا تھا کہ وہ آپ کو بچا سکے – خدا کی دی ہوئی سیرت کا استعمال کریں تاکہ آپ اپنی زندگی میں سہی اور غلط کا امتیاز کر سکیں –برج میزان کے زائچے کی عبارت میں ‘لے پالک ‘ کے  جو معنی ہیں ہو سکتا ہے کہ اس نقطے پر صاف نہ ہو پر اگر آپ روزانہ مانگنا جاری رکھیںگے ، کھٹکھٹا نا اور ڈھونڈ نا جاری رکھیںگے تو وہ آپ کی رہنمائی کریگا – آپ کے پورے ھفتے کے دوران ، کسی بھی وقت ، کسی  بھی دن اسے کیا جا سکتا ہے –         

برج میزان اور برج عقرب

انسانی تاریخ کی شروعات سے لیکر برج میزان کی تصویر بدلی ہوئی ہے – قدیم نجومی تصویروں میں اور ناموں میں جو برج میزان میں تاروں کو د یا گیا ہے ہم دیکھتے ہیں کہ برج عقرب ،برج میزان کو اپنے چنگل میں لینے کو پہنچ رہا ہے – سب سے زیادہ چمکیلا تارا زبینس شمالی  جو عربی کا  محاورہ  ‘ال – زبان ال – ساماللیہ’ جس کے  معنی ہیں "شمالی پنجہ”- برج میزان میں دوسرا چمکیلا تارا  ‘ زبینل جنوبی ‘ جو عربی کا محاورہ  ‘ال – زبان ال – جنوبییہ‘ جس کے معنی ہیں "جنوبی پنجہ ” برج عقرب کے دونوں پنجے برج میزان کے چنگل میں ہو رہے ہیں – یہ ظاہر کرتا ہے کہ ان دونوں مخالفوں کے درمیان ا یک زبردست لڑائی جاری ہے – اگلے برج عقرب میں ہم چھان بین کرینگے کس طرح ظاہر ہوتی ہے – منطقہ البروج کی کہانی کو سمجھنے کے لئے اس کی شروعات کو برج کنیا کی نشانی میں دیکھیں –

برج میزان کی تحریری کہانی میں گہرائی مے جانے کے لئے :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے